سائنس کا شکریہ : گنج پن کے علاج کے لیے نیا بائیو کیمیائی مواد دریافت

44

لاہور (نیٹ نیوز ) دنیا بھر میں لوگ اپنے بالوں پر مختلف طریقوں سے توجہ دیتے ہیں بلکہ بعض مرد اور خواتین کے نزدیک تو بالوں کا انداز ان کی شخصیت اور زمانے کے فیشن کے ساتھ چلنے کی صلاحیت کو ظاہر کرتا ہے۔ جو لوگ اپنے بالوں کو نمایاں کر کے ظاہر کرنے کے شوقین ہوتے ہیں ان کے لیے سر پر گنج پن کے نمودار ہونے کی ابتدا کسی المیے سے کم نہیں ہوتی۔ یہاں تک کہ جو بالوں کے انداز پر خاص توجہ نہیں بھی دیتے ان کو بھی گنج پن کا آغاز کچھ حد تناؤ میں مبتلا کر دیتا ہے۔
کیا گنج پن کا کوئی علاج ہے ؟ اس سوال کا جواب العربیہ ڈاٹ نیٹ “Futurism” نامی ویب سائٹ پر جاری ایک سائنسی مقالے کی روشنی میں دے رہی ہے۔ گنج پن سے متعلق امریک ایسوسی ایشن (AHLA) کے مطابق مردوں میں گنج پن کی 95% سے زیادہ حالتوں میں اینڈرو جینیٹک ایلوپیسیا بالوں کے گرنے کا سبب بنتا ہے۔ تقریباً 35 برس کی عمر تک پہنچنے پر دو تہائی کے قریب امریکی مردوں کو کسی درجے میں بالوں کے گرنے کا سامنا ہوتا ہے۔ مذکورہ ایسوسی ایشن AHLA کے مطابق گنج پن کا شکار ہونے والے امریکیوں میں 40% خواتین ہوتی ہیں۔ AHLA کا یہ بھی کہنا ہے کہ بالوں کے گرنے کے علاج کے لیے فروخت ہونے والی 99% مصنوعات کے مؤثر نتائج نہیں نکلتے۔ لہذا گنج پن کا شکار افراد کے لیے سادہ سا حل یہ ہوتا ہے کہ وہ بنا کسی علاج کے بالوں سے محروم رہ کر ہی زندگی گزا ریں۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.