اچھی صحت کے لیے سب سے اہم ہے کہ صبح کا ناشتہ کیا جائے لیکن اکثر صبح دفاتر جانے والے افراد اور خاص طور پر طلباء وقت کی کمی کے باعث ناشتہ نہیں کرپاتے، ایسی صورت میں بادام صحت کے لیے نہایت مفید ثابت ہوتے ہیں۔ کیلیفورنیا یونیورسٹی کی ایک حالیہ تحقیق کے مطابق جو افراد ناشتہ ترک کردیتے ہیں، وہ اس کے بجائے بادام کھالیں تو یہ صحت کے لیے مفید نسخہ ہے۔ تحقیق کے مطابق بادام میں بھرپور غذائیت پائی جاتی ہے۔ اس میں چکنائی، پروٹین، وٹامن ای اور میگنیشئیم وافر مقدار میں موجود ہوتا ہے جو جسم کو کمزوری سے دور رکھتے ہیں۔ بادام کھانے سے بھوک مٹ جاتی ہے، بلڈ پریشر اور کولیسٹرول کنٹرول رہتا ہے اور ساتھ ہی وزن میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔ اس تحقیق کے لیے فرسٹ ایئر کے نوجوان طلباء کے دو گروپ بنائے گئے جن میں سے ایک گروپ 30 طلباء جبکہ دوسرا 35 طلباء پر مشتمل تھا۔ 30 طلباء کو 8 ہفتوں تک ہر روز ناشتے کے بجائے 56 گرام بادام کھانے کی ہدایت کی گئی جو کہ 320 کیلوریز کے برابر ہیں جب کہ 35 طلباء کو اسنیک کھانے کا کہا گیا جو کہ 338 کیلوریز کے برابر ہوں۔ تحقیق کے لیے ان طلباء پر 8 ہفتوں تک کڑی نظر رکھی گئی، جس کے نتیجے میں یہ بات سامنے آئی کہ اسنیکس کھانے والے طلباء کے مقابلے میں بادام کھانے والے طلباء میں ذیابیطس اور بلڈ پریشر متوازن رہا۔ تاہم غذائی ماہرین کے مطابق اُصولاً ناشتہ کبھی ترک نہیں کرنا چاہیے لیکن اگر ایسا ہوجائے تو پھر باداموں سے بھی کام چلایا جاسکتا ہے، ہاں لیکن اسے معمول نہ بنائیں

50

لگ بھگ سب ہی ملک شیک کو پسند کرتے ہیں خصوصاً کیلے سے تیار کردہ یہ مشروب تو بہت زیادہ استعمال ہوتا ہے۔

ذائقے میں اچھا ہونے کے ساتھ یہ توانائی بھی فراہم کرتا ہے مگر کچھ حلقے اس امتزاج کو صحت کے لیے نقصان دہ قرار دیتے ہیں تو کیا واقعی یہ ٹھیک ہے؟

درحقیقت یہ موضوع بحث کا موضوع بنتا رہتا ہے مگر کیا کیلے اور دودھ کا امتزاج واقعی نقصان دہ ہے یا صحت کے لیے فائدہ مند ہے؟

 

تو اس کا جواب ہے کہ یہ مشروب واقعی فائدہ مند ہے کیونکہ اس میں موجود پروٹین اور کاربوہائیڈریٹس کا متوازن امتزاج ورزش کے بعد مسلز مضبوط بنانے میں مدد دیتا ہے۔

اسی طرح کیلے کے ملک شیک سے جسم کو پروٹین، فائبر، کیلشیئم، وٹامنز اور منرلز ملتے ہیں اور ہاں یہ جسمانی وزن نہیں بڑھاتا (اگر اعتدال میں رہ کر پیا جائے)۔

جیسا اوپر بتایا جاچکا ہے کہ پروٹین مسلز کی نشوونما میں مدد دیتے ہیں، وٹامنز اور منرلز میٹابولز کو بہتر کرنے کے ساتھ جسمانی افعال کو زیادہ موثر طریقے سے کام کرنے میں مدد دیتے ہیں۔

اسی طرح اس مشروب میں موجود فائبر پیٹ کو زیادہ دیر تک بھرا رکھتا ہے جس سے بے وقت منہ چلانے کی روک تھام ہوتی ہے۔

 

دودھ پروٹین، وٹامنز، منرلز، کیلشیم اور وٹامن بی 1 سے بھرپور ہوتا ہے جبکہ سو گرام دودھ میں 42 کیلوریز ہوتی ہیں جبکہ کیلے وٹامن بی سکس، وٹامن سی، غذائی فائبر، پوٹاشیم اور بائیو ٹین سے بھرپور ہوتے ہیں۔

سو گرام کیلے میں 89 کیلوریز ہوتے ہیں مگر پیٹ کو زیادہ دیر تک بھرا رکھتے ہیں جبکہ جسمانی توانائی بھی بڑھاتے ہیں۔

تاہم اگر کیلے کے ملک شیک کی زیادہ مقدار کو استعمال کیا جائے تو ہاضمہ خراب ہونے کا امکان ہوتا ہے۔

نوٹ: یہ مضمون عام معلومات کے لیے ہے۔ قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ لیں۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.