ٹرمپ کا شام سے داعش کے خاتمے تک عسکری کارروئیاں جاری رکھنے کا وعدہ

14

امریکا نے جنگ زدہ ملک شام سے دہشت گرد تنظیم ‘داعش’ کے خلاف 100 فیصد کامیابی تک اپنی عسکری کارروائیاں جاری رکھنے کا وعدہ کرلیا۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے ‘اے ایف پی’ کے مطابق واشنگٹن میں مدعو 70 ممالک کے حکام کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ ’متعلقہ فریقین کو داعش کے خلاف مزید تعاون کرنے کی ضرورت ہے، تاہم شام کی تمام ریاستوں سے انتہا پسندی جلد قصہ پارینہ بن جائے گی‘۔

 

واضح رہے کہ گزشتہ برس دسمبر میں ڈونلڈ ٹرمپ نے شام سے تمام 2 ہزار فوجیوں کو واپسی کا حکم دے کر دنیا کو تشویش میں ڈال دیا تھا۔

امریکی صدر نے اپنے خطاب میں کہا کہ ’امریکی اتحادی فوجیوں اور کردش فورسز نے داعش سے ’تقریباً تمام ہی ریاستیں آزاد‘ کرالی ہیں، جو شام اور عراق میں خود ساختہ نظام خلافت کے ذریعے حکمرانی کرنا چاہتے تھے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ’داعش کی جنونیت سے وابستہ ہر شخص کو شکست دی جائے گی‘۔

کانفرنس کے آغاز میں امریکی سیکریٹری اسٹیٹ مائیک پومپیو نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے فوجیوں کی واپسی کے فیصلے میں کوئی تبدیلی نہیں ہے، تاہم ہماری عسکری حکمت عملی صرف جنگی نوعیت کی نہیں ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ہم ایسے دور میں داخل ہورہے ہیں جہاں دہشت گرد مختلف حصوں میں تقسیم ہو چکے ہیں۔

دوسری جانب امریکی حکام نے کہا کہ فوجیوں کی واپسی کا عمل جاری ہو گا لیکن بتدریج انداز میں۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.