فاٹا اصلاحات پر حکومت کاغیر سنجیدہ رویہ انتشارکا باعث بن سکتا ہے: عمران خان

15

اسلام آباد:  عمران خان کا کہنا ہے حکومت کا غیر سنجیدہ رویہ فاٹا عوام کی توہین ہے، فاٹا اصلاحاتی پیکیج پر عملدر آمد میں تاخیر سے فاٹا میں بدامنی اور سنگین نتائج کا خدشہ ہے۔

Govt’s non-serious approach to FATA reforms is an insult to the ppl of FATA who have sacrificed so much but have still to be given their full democratic rights. Delay in implementing the complete reforms package is causing unrest in FATA & will have serious repercussions.

We demand the govt immed table before NA a full package of FATA reforms incl abolition of FCR; extension of SC & PHC jurisdiction; & amendment in Article 106 allowing for increase of seats in KP assembly to accommodate representatives from FATA. https://twitter.com/ImranKhanPTI/status/940496803107168256 

چیئرمین پی ٹی آئی نے قومی اسمبلی میں فاٹا اصلاحات بل ایوان میں پیش نہ ہونے پر اپنے ردعمل میں کہا بے انتہاء قربانیاں پیش کرنے والے قبائلی عوام ابھی تک جمہوری حقوق سے محروم ہیں۔ عمران خان نے مطالبہ کیا حکومت فاٹا اصلاحات کا مکمل پیکیج بلا تاخیر پارلیمان کے سامنے پیش کرے، پختونخوا اسمبلی میں فاٹا کے نمائندوں کو جگہ دینے کیلئے آئین کے آرٹیکل 106 میں ترمیم نا گزیر ہے۔ انہوں نے کہا ایف سی آر کے خاتمے اور عدالت عالیہ و عظمیٰ کا دائرہ کار فاٹا تک بڑھایا جائے۔

دوسری جانب قائد حزب اختلاف خورشید شاہ سے اپوزیشن رہنماؤں کی ملاقات میں فاٹا اصلاحات بل کے حوالے سے پارلیمانی کمیٹی قائم کی گئی جس میں اعجاز جاکھرانی، فرحت اللہ بابر، سراج الحق، صاحبزادہ طارق اللہ شامل ہیں، میاں عتیق، شیخ صلاح الدین اور حاجی شاہ جی گل آفریدی بھی کمیٹی کے رکن ہیں۔ عمران خان سے مشاورت کے بعد تحریک انصاف کے دو نام دیئے جائیں گے۔

محموداچکزئی کا کہنا ہے کہ وہ کسی صورت فاٹا اصلاحات بل آگے نہیں بڑھنے دیں گے، یہ انتہائی نازک مسئلہ ہے، پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں بات کی جائے۔ شاہ جی گل آفریدی کا کہنا ہے کہ اچکزئی صاحب سے کہا فاٹا میں ریفرنڈم کروا لو، ریفرنڈم میں فاٹا عوام سے سوال پوچھا جائے کہ وہ پاکستان کیساتھ ہیں یا نہیں، جب تک اس حوالے سےبل ایوان میں نہیں لایا جاتا ایوان کی کارروائی نہیں چلنے دیں گے۔ صاحبزادہ طارق اللہ کا کہنا تھا کہ فاٹا مسئلہ حل کرنے کی ضرورت ہے، ایسا نہ ہو کہ بنگلہ دیش طرز کا کوئی حل آ جائے۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.