بلوچستان حکومت بحران کا شکار، وزیراعلیٰ کے مشیر نے بھی استعفیٰ دیدیا

342

کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثنااللہ زہری کے خلاف اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد آنے کے بعد استعفوں کی بھرمار شروع ہوگئی۔

عام انتخابات سے قبل بلوچستان اسمبلی شدید بحران کا شکار ہے جہاں ایک جانب وزیراعلیٰ کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک اسمبلی میں پیش کردی گئی وہیں وزیروں نے بھی استعفے جمع کرانا شروع کردیے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثنااللہ زہری کے مشیر پرنس احمد علی احمدزئی نے اپنا استعفیٰ گورنر بلوچستان کو بھجوا دیا جب کہ ان سے قبل وزیر ماہی گیری میر سرفراز چاکر ڈومکی نے اپنا استعفیٰ پیش کیا تھا۔

دوسری جانب وزیراعلیٰ بلوچستان کی جانب سے صوبائی وزیرداخلہ کو عہدے سے ہٹائے جانے کی خبروں کے بعد میر سرفراز بگٹی نے بذریعہ ٹوئٹ بتایا تھا کہ وہ اپنا استعفیٰ گورنر کو بھجوا چکے ہیں اور انہیں عہدے سے ہٹانے کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں۔

خیال رہے کہ وزیراعلیٰ بلوچستان کے خلاف گزشتہ روز رکن اسمبلی عبدالقدوس بزنجو اور سید آغا رضا کی جانب سے عدم اعتماد کی تحریک جمع کرائی گئی جس پر 14 اراکین اسمبلی کے دستخط تھے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان پر عدم اعتماد کی تحریک پر دستخط کرنے والے اراکین میں میر قدوس بزنجو، میر کریم نوشیروانی، آغا رضا، میر خالد لانگو، نوابزادہ طارق مگسی، ڈاکٹر رقیہ سعید ہاشمی، محمد اختر مگسی، زمرد خان اچکزئی، حسین بانو، شاہدہ رؤف، خلیل الرحمان، عبدالمالک کاکٹر اور امان اللہ نوتیزئی شامل ہیں۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.