بلوچستان کا مالی سال 19-2018 کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا

76

کوئٹہ: بلوچستان کا مالی سال 19-2018 کے خسارے کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا۔

سرکاری ذرائع کے مطابق بلوچستان کا مالی سال 19-2018 کے خسارے کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا، بجٹ کا کل حجم 353 ارب سے زائد ہے، مجموعی آمدنی کا تخمینہ 290 ارب 29 کروڑجب کہ دیگرذرائع سے آمدنی کا تخمینہ 22 ارب سے زائد ہے۔ بجٹ میں خسارے کا تخمینہ 60 ارب روپے زائد ہونے کا امکان ہے تاہم آئندہ مالی سال کے بجٹ ملازمین کی تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ کیا جارہا ہے۔ ریٹائرڈ ملازمین کے پینشن میں وفاقی حکومت کے اعلان کے مطابق اضافہ کیا جائے گا، آئندہ مالی سال کے بجٹ میں 3 ہزارسے آسامیاں مختص کیئے جانے کا بھی امکان ہے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق امن وامان کی مد میں اخراجات کا تخمینہ 38 ارب 9 کروڑ روپے ہے، غیرملکی ترقیاتی امداد کی مد میں 9 ارب 23 کروڑروپے ملنے کا امکان ہے۔ تعلیم کے شعبے کے لیے 56 ارب 54 کروڑ روپے رکھے گئے ہیں، سماجی تحفظ کے شعبے کے اخراجات کا تخمینہ 3 ارب 97 کروڑ روپے ہے جب کہ این ایف سی ایوارڈ کے تحت قابل تقسیم محاصل کا اندازہ 243 ارب 17 کروڑروپے سے زیادہ ہے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق ثقافت، تفریحی سیاحت اورمذہبی امورکے شعبوں کے لیے 2 ارب 28 کروڑروپے رکھے گئے، ماحولیات کے شعبے کے لیے 34 کروڑروپے مختص ہیں، معاشی خدمات کے شعبوں کے لیے مجموعی طورپر55 ارب 70 کروڑروپے رکھے گئے ہیں، ہاؤسنگ اورکمیونٹی سروسزکے شعبوں کے لیے 6 ارب 30 کروڑروپے مختص کیئے گئے ہیں جب کہ ترقیاتی مد میں اخراجات کا تخمینہ 90 ارب روپے کے لگ بھگ ہے، صوبے کے اپنے وسائل سے آمدن کا تخمینہ 15 ارب 39 کروڑ روپے ہے۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.