بھیڑیں انسانی چہروں کو پہچاننے کی صلاحیت رکھتی ہیں، محققین

17

نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ انسانوں اور بندروں کی طرح بھیڑیں بھی چہروں کو پہچاننے کی صلاحیت رکھتی ہیں۔

رائل سوسائٹی جرنل ’’اوپن سائنس‘‘ میں شائع ہونے والی رپورٹکے مطابق تجربے کے دوران بھیڑوں کے انسانی چہروں کو پہچاننے کی حیرت انگیز قابلیت سامنے آئی۔

کیمبرج یونیورسٹی کے محققین نے 8 مادہ پہاڑی بھیڑوں کو پہلے معروف شخصیات کے چہروں کو پہچاننے کی تربیت دی اور انہیں سابق امریکی صدر براک اوباما، اداکار جیک گائیلن ہال، ایما واٹسن اور نیوز کاسٹر فیونا بروس کے چہرے یاد کرائے گئے۔

پھر ان بھیڑوں کو دو کمپیوٹر اسکرینز پر مختلف تصاویر کے ساتھ ان شخصیات کی تصویریں بھی دکھائی گئیں جو انہیں یاد کرائی گئی تھیں۔ بھیڑوں نے اس تجربے کے دوران زیادہ تر ان شخصیات کی تصویروں کی جانب رخ کیا جو انہیں یاد تھیں۔

جب محققین کو اندازہ ہوا کہ بھیڑوں نے معروف شخصیات کو پہچاننا شروع کردیا ہے تو انہوں نے انہیں ایک اور ٹاسک سونپا اور یہ دیکھنے کی کوشش کی کہ اگر ان بھیڑوں کو وہی تصاویر مختلف زاویوں سے دکھائی جائیں تو کیا وہ اسے پہچان سکیں گے؟

بھیڑیں اس امتحان میں بھی کامیاب رہیں اور انہوں نے ان شخصیات کی تصویروں کو پہچان لیا جو انہیں شناخت کرائی گئی تھیں۔

محققین نے اس کامیابی کے بعد ایک اور تجربہ کیا اور یہ جاننے کی کوشش کی کہ کیا بھیڑیں اپنی دیکھ بھال کرنے والے شخص کو دیگر افراد کی تصویروں میں سے پہچان سکتی ہیں؟ اس تجربے میں بھی بھیڑوں نے مایوس نہیں کیا۔

ان تجربات کے بعد سائنسدان اس نتیجے پر پہنچے کہ چہروں کو شناخت کرنے کی بھیڑوں کی قابلیت انسانوں اور بندروں سے مماثلت رکھتی ہے۔ محققین کا کہنا ہے کہ مستقبل میں یہ جاننا بھی دلچسپ ہوگا کہ آیا بھیڑیں انسانی چہرے کے تاثرات پہچاننے کی صلاحیت رکھتی ہیں یا نہیں۔

سائنسدانوں کو امید ہے کہ اس تجربے سے دماغی بیماری ہنٹنگٹنز (رعشہ مزمن) اور پارکنسنز کے بارے میں مزید جاننے کا بھی موقع ملے گا۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.