فیس بک ہی نہیں گوگل، ایمازون، ٹوئٹر بھی صارفین کا ڈیٹا محفوظ کرتے ہیں

14

فیس بک نے سماجی رابطہ پلیٹ فارمز فراہم کرنے والی نامور کمپنیوں کے طریقہ کار کی نشاندہی کردی کرتے ہوئے کہا ہے کہ صرف فیس بک ہی نہیں گوگل، ایمازون اور ٹوئٹر بھی صارفین کا ڈیٹا محفوظ کرتے ہیں۔

کمپنی نے اپنے ایک بلاگ میں وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ٹیکنالوجی کمپنیوں کے لیے یہ معمول کا طریقہ کار ہے۔

کمپنی کے ایک اعلیٰ عہدیدار کا کہنا ہے کہ ٹوئٹر، پن ٹریسٹ اور لنکڈ اِن کے انٹرنیٹ صفحات پر بھی لائیک اور شئیر بٹن موجود ہیں جبکہ گوگل کا اینالیٹکس نظام بھی فیس بک سے مماثلت رکھتا ہے۔

مذکورہ عہدیدار کا مزید کہنا تھا کہ انٹرنیٹ پر سماجی رابطے کی سہولت فراہم کرنے والی کمپنیوں کی اکثریت صارفین کی معلومات کو اشتہارات کے بہتر چناؤ کے لیے استعمال کرتی ہے۔

مزید بتایا گیا کہ صارفین کا ڈیٹا پلگ ان یا سروسز کے ذریعے اکٹھا کیا جاتا ہے۔

واضح رہے کہ فیس بک کو اِن دنوں ڈیٹا لیکس اسکینڈل کا سامنا ہے، جس میں انکشاف ہوا تھا کہ ایک سیاسی کنسلٹنسی فرم کیمبرج اینالیٹیکا نے کروڑوں فیس بک صارفین کے ڈیٹا کو مبینہ طور پر 2016 کے امریکی صدارتی الیکشن پر اثرانداز ہونے کے لیے استعمال کیا۔

جس پر فیس بک کے سربراہ مارک زکربرگ نے صارفین کا ذاتی ڈیٹا لیک کیے جانے کے حوالے سے اپنی غلطی کا اعتراف بھی کرلیا تھا۔

مزید خبریں

اپنی رائے دیجئے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.