Mashriq Newspaper

سپریم کورٹ نے 62 (ون) (ایف) کے تحت سیاستدانوں کی تاحیات نااہلی ختم کردی

سپریم کورٹ نے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت تاحیات نااہلی کے اپنے ہی فیصلے کو کالعدم قرار دے دیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں 7 رکنی بینچ نے تاحیات نااہلی کی مدت سے متعلق کیس کا فیصلہ سنایا جسے عدالت نے پانچ جنوری کو دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

آج سپریم کورٹ نے اوپن کورٹ میں فیصلہ سناتے ہوئے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت تاحیات نااہلی کا سپریم کورٹ کا ہی پرانا فیصلہ کالعدم قرار دے دیا۔

 

عدالت نے اپنے اکثریتی فیصلے میں سمیع اللہ بلوچ کیس کا فیصلہ اوور رول کرتے ہوئے قرار دیا کہ 62 ون ایف کو آئین سے الگ کرکے اکیلا نہیں پڑھا جا سکتا، الیکشن ایکٹ کے تحت نااہلی کی مدت پانچ سال ہے جسے پرکھنے کی ضرورت نہیں، الیکشن ایکٹ کا قانون فیلڈ میں موجود ہے۔

عدالت نے قرار دیا کہ سمیع اللّٰہ بلوچ کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جاتا ہے، عدالتی ڈیکلریشن کے ذریعے 62 ون ایف کی تشریح اس کو دوبارہ لکھنے کے مترادف ہے، عدالتی ڈیکلیریشن دینے کے حوالے سے کوئی قانونی طریقہ کار موجود نہیں ہے۔

تاحیات نااہلی کیس فیصلے میں جسٹس یحییٰ آفریدی کا اختلافی نوٹ

چیف جسٹس نے اس فیصلے کو ویب سائٹ پر جاری کرنے کی بھی ہدایت دی۔ یہ فیصلہ چھ ایک کی اکثریت سے سامنے آیا جس میں جسٹس یحییٰ آفریدی نے اختلاف کیا اور کہا کہ اکثریتی فیصلے سے اختلاف کرتا ہوں۔

جسٹس یحییٰ خان آفریدی نے اختلافی نوٹ میں کہا کہ تاحیات نااہلی کے فیصلے کو درست قرار دیا اور کہا کہ کسی بھی رکن اسمبلی کی ناہلی سپریم کورٹ کا فیصلہ برقرار رہنے تک رہے گی، سپریم کورٹ کے پاس آئین کے آرٹیکل 184(3) میں کسی کی نااہلی کا اختیار نہیں، سمیع اللہ بلوچ کیس میں نااہلی نہ تاحیات ہے نہ ہی مستقل، سمیع اللہ بلوچ کیس میں طے کردہ اصول درست ہے۔

واضح رہے کہ چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں لارجر بینچ نے چار سماعتیں کی تھیں اور فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

اس عدالتی فیصلے سے نواز شریف، جہانگیر ترین سمیت متعدد سیاست دانوں کو ریلیف ملے گا۔ اس فیصلے کے بعد اب سابق وزیراعظم نواز شریف کو اقامہ کیس میں نااہل کرنے کا سپریم کورٹ کا فیصلہ بھی ختم ہوگیا، فیصلے کے بعد باسٹھ ون ایف میں نااہلی الیکشن ایکٹ کے مطابق ہوگی اور الیکشن ایکٹ میں 62 (1) ایف کے تحت نااہلی کی مدت پانچ سال مقرر ہے۔

آئین میں آرٹیکل 62 ون ایف کی مدت کا تعین نہیں کیا گیا، فیصلہ

اپنے مختصر حکم نامے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ آئین میں آرٹیکل 62 ون ایف کی مدت کا تعین نہیں کیا گیا، آرٹیکل 62 ون ایف کا ڈیکلریشن دینے کیلئے کوئی قانونی طریقہ کار ہی موجود نہیں، آرٹیکل 62ون ایف کے تحت ڈیکلریشن دینے کیلئے شفاف ٹرائل کے آئینی حق کو مدنظر رکھا جائے۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ محض ذمہ داریوں یا سول رائٹس کی بنیاد پر آرٹیکل 62 ون ایف کا اطلاق آئین میں اضافے کے مترادف ہے، سپریم کورٹ نے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت نااہلی کی مدت تاحیات کرکے آئین میں اضافہ کیا، نااہلی تاحیات مقرر کرنے کے سمیع اللہ بلوچ کیس فیصلے کو مسترد کرتے ہیں، الیکشن ایکٹ کی شق 232 کی ذیلی شق دو کے تحت نااہلی کی مدت پانچ سال کرنے کی قانون سازی درست ہے۔

اب 62 ون ایف کے تحت کاغذات نامزدگی پر کوئی اعتراض نہیں کیا جاسکتا، اٹارنی جنرل

اٹارنی جنرل نے فیصلے پر کہا ہے کہ تمام ہائی کورٹس اورسپریم کورٹ نے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت جتنے بھی ڈیکلریشن دئیے سب ختم ہوگئے، اس فیصلے کے بعد 62 ون ایف کے تحت کاغذات نامزدگی پر اب کوئی اعتراض نہیں اٹھایا جاسکتا، جب تک نئی پارلیمنٹ اس قانون پر نئی قانون سازی نہیں کرلیتی تب تک یہی قانون ہوگا۔

انہوں ںے کہا کہ نہ تو ہائی کورٹس اور نہ ہی دیگر کورٹس ڈیکلریشن دے سکتی ہیں ابھی قانون نے بتایا نہیں کہ کون سی کورٹ ڈیکلریشن دے سکتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پانچ سالہ نااہلی کے معاملے کو ابھی سپریم کورٹ نہیں چھیڑا، جب اس پرواضح قانون آجائے گا متعلقہ فورم آجائے گا اور پروسیجر بھی آجائے گا تو پھر کورٹ دیکھے گی کہ یہ پانچ سالہ نااہلی بھی مناسب ہے یا نہیں اور اُس فیصلے کے بعد پانچ سالہ نااہلی کا جو قانون ہے اس پر عمل نہیں ہوسکے گا کیونکہ تمام ڈیکلریشن اب کالعدم ہوچکے ہیں۔

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.