Mashriq Newspaper

مصنوعی ذہانت کے عالمی مقابلے میں سعودی عرب کے طلبہ کی 11 میڈلز کے ساتھ پہلی پوزیشن

سعودی عرب کے طلبہ نے مصنوی ذہانت کے عالمی مقابلے میں 11تمغے حاصل کر کے دنیا بھر میں پہلی پوزیشن اپنے نام کر لی۔

سعودی اخبار اردو نیوز کی رپورٹ کے مطابق ورلڈ آرٹیفیشل انٹیلی جنس کمپیٹیشن فار یوتھ (ڈبلیو اے آئی سی وائی)میں امریکا، بھارت، یونان، کینیڈ اور سنگاپور سمیت چالیس ممالک کے 18 ہزار طلبہ نے شرکت کی۔

بین الاقوامی مقابلے کا اہتمام سعودی ڈیٹا اینڈ آرٹیفیشل انٹیلی جنس اتھارٹی ”سدایا“ نے کنگ عبداللہ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی یونیورسٹی(کاوسٹ) کے تعاون سے کیا تھا، مقابلے میں سعودی عرب کے 18 منصوبے کامیاب رہے۔

ان میں سے 11 منصوبوں پر سونے، چاندی اور کانسی کے میڈلز ملے جبکہ 6039 منصوبوں میں 7 منصوبے ایڈوانس پوزیشن پر رہے۔امریکا نے دس، بھارت اور یونان نے دو دو جبکہ کینیڈا اور سنگاپور نے ایک ایک میڈل حاصل کیا۔

مقابلے میں سعودی عرب کی نمائندگی مسک، الزھران، مداک، کاوسٹ، آرامکو، العلا اور نیوم کے پرائمری، مڈل اور ثانوی سکولوں کے طلبہ نے کی۔ اس موقع پرسعودی طلبہ کی برتری پر سدایا اور کاوسٹ کو عالمی سطح پر ایکسیلینس آرگنائزیشن ایوارڈ دیا گیا جبکہ مصنوعی ذہانت کی تعلیم کے فروغ میں سدایا اور کاوسٹ کی کوششوں کا اعتراف بھی کیا گیا۔

You might also like
Leave A Reply

Your email address will not be published.